مقناطیسی ذرّات والے ریشمی مادّے سے ٹوٹی ہڈیوں کا علاج

بارسلونا: پرتگال اور اسپین کے سائنسدانوں نے مشترکہ تحقیق کرتے ہوئے ایک نیا مادّہ ایجاد کرلیا ہے جو ٹوٹی ہڈیوں کو تیزی سے دوبارہ جوڑنے میں بہت مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔ یہ منفرد مادّہ ’’فائبریون‘‘ کہلانے والے ایک ریشمی پروٹین اور مقناطیسی خصوصیات والے نینو ذرّات کو یکجا کرکے تیار کیا گیا ہے۔

جب یہ مادّہ کسی ٹوٹی ہڈی میں متاثرہ مقام پر لگا کر ارد گرد مقناطیسی میدان پیدا کیا جاتا ہے تو اس میں شامل خاص نینو ذرّات، ہڈی کے صحت مند خلیات کو متاثرہ مقام کی طرف کھینچتے ہیں جو وہاں پہنچ کر ٹوٹی ہڈی کی دوبارہ سے مرمت شروع کردیتے ہیں، اور یوں یہ زخم بھی بہت تیزی سے مندمل ہونے لگتا ہے۔

ماضی میں بھی ایسے ہی کچھ طریقوں سے ہڈیوں کی نئے سرے سے افزائش کا کام لیا جاچکا ہے مگر ان سب طریقوں سے ہڈی کی مکمل بحالی میں بہت وقت لگ جاتا ہے۔

زخم مندمل ہونے کے قدرتی عمل میں متاثرہ مقام پر موجود خلیات ایک سالماتی ’’ہماری جان بچاؤ‘‘ (ایس او ایس) کا پیغام نشر کرتا ہے جو ارد گرد کے صحت مند خلیوں میں سرگرمی بڑھاتا ہے اور وہ اپنی نقلیں بنا کر تازہ دم خلیات متاثرہ مقام کی طرف بھیجنے لگتے ہیں۔

یہ صحت مند خلیات وہاں پہنچ کر متاثرہ خلیات کی جگہ لیتے ہیں اور یوں وہ زخم آہستہ آہستہ بھر جاتا ہے۔ اگر یہ عمل کسی طرح تیز رفتار بنایا جاسکے تو زخم بھی بہت تیزی سے مندمل کیے جاسکتے ہیں۔