آغا خان یونیورسٹی کے تعاون سے حفاظتی ٹیکہ جات کی مہم کو موثر بنانے کے لیے ملک گیر سروے کا آغاز ۔

اسلام آباد (نمائندہ آفاق) محفوظ اور صحت مند پاکستان کی خاطر بچوں کو دس مہلک بیماریوں سے بچاؤ کے لیے حفاظتی ٹیکہ جات ( ایمیونائزیشن) کی مہم کو مزید موثر بنانے اور اس کے دائرہ کار کو بڑھانا ہوگا ۔جس کے لئے آغا خان یونیورسٹی کے تعاون سے ملک گیر سروے کا آغاز کردیا گیا ہے۔جس کا دائرہ کار آزاد کشمیر گلگت بلتستان سمیت ملک بھر کے 156 اضلاع پر محیط ہو گا۔ اور اس کے نتائج کی روشنی میں ایک جامع اور ٹھوس پالیسی مرتب کرنے میں مدد ملے گی ان خیالات کا اظہار گزشتہ روز اسلام آباد میں ویمن اینڈ چائلڈ ہیلتھ سینٹر آغا خان یونیورسٹی کے زیر اہتمام منعقدہ افتتاحی تقریب سے نیشنل پروگرام مینیجر ای پی آئی ڈاکٹر رانا محمد صفدر, آغا خان یونیورسٹی سے پرنسیپل انویسٹیگیٹر آف سروے پروفیسر ڈاکٹر ساجد بشیر صوفی اور دیگر مقررین نے کیا . ڈاکٹر رانا محمد صفدر نے کہا کہ سروے کے نتائج سے وزارت صحت کوحفاظتی ٹیکہ جات کے حوالے سے ایک موثر اور جامع پروگرام مرتب کرنے میں مدد ملے گی جس سے مہلک امراض سے بچاؤ کے لیے ہر بچے تک ویکسین کی پہنچ کو یقینی بنایا جائے گا۔ اس موقع پر پروفیسر ڈاکٹر ساجد بشیر صوفی نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ سروے کے دوران ڈیٹا کلیکشن کے اعلی معیار کو مدنظر رکھتے ہوئے اقدامات کو یقینی بنایا گیا ہے اور اس سے حاصل ہونے والے نتائج سے پالیسی میکرز کو یقینا جامع اور موئثر پالیسی مرتب کرنے میں مدد ملے گی۔ تقریب میں ڈپٹی ڈائریکٹر ای پی آئی ڈاکٹر صوفیہ یونس ،ڈاکٹر الطاف حسن ،بی ایم جی ایف کے ڈاکٹر محمد عاطف ،اے کے یو سے کو- پرنسپل انویسٹیگیٹر امتیاز حسین پراجیکٹ ڈائریکٹر عمران احمد چودھری ڈاکٹر مدثر الطاف اور دیگر نے شرکت کی ۔ یہ تھرڈ پارٹی ویریفکیشن سروے آغا خان یونیورسٹی کے زیر اہتمام کیا جارہا ہے جو دسمبر تک مکمل کر لیا جائے گا جبکہ اس میں وفاقی و صوبائی محکمہ صحت ، پی بی ایس ،ورلڈ بینک ،ڈبلیو ایچ او، جی اے وی آئی اور دیگراداروں کا مکمل تعاون اور مدد شامل ہے۔