یوٹیلیٹی سٹورز کو 2 ارب سبسڈی کے باوجود اشیائے خورونوش کی فراہمی ممکن نہ ہو سکی

لاہور:  حکومت نے یوٹیلیٹی سٹورز کو 2 ارب روپے کی سبسڈی دینے کے لیے فنڈز جاری کر دیئے ہیں لیکن اسکے باوجود سٹوریز پر اشیائے خوردونوش کی فراہمی یقینی بنانے کے لیئے تاحال یوٹیلیٹی سٹورز حکام نے اقدامات نہیں کئے جس کی وجہ سے شہری عام مارکیٹ سے ہی خریداری کرنے پر مجبور ہیں۔

ملتان ریجن میں 450 یوٹیلیٹی سٹورز کو ماہ رمضان میں 49 کروڑ روپے کی سیل کرنے کا ہدف دیا گیا ہے لیکن اس کے باوجود تاحال یوٹیلیٹی سٹورز حکام نے مختلف اشیاء کے سٹاک کی فراہمی یقینی نہیں بنائی جسکی وجہ سے ریجن کے تمام سٹورز خالی ہونے پر شہریوں کا مایوس ہی گھروں کو لوٹنا مجبوری بن گیا ہے۔

یوٹیلیٹی سٹورز حکام کا کہنا ہے کہ شہریوں کو سبسڈی دینے کا فارمولا طے نہیں ہو سکا جس کی حکمت عملی طے ہوتے ہی اشیائے خوردونوش کی فراہمی شروع کر دیں گے۔ عام مارکیٹ اور یوٹیلیٹی سٹورز کی قیمتوں میں مناسب فرق سے سٹوروں کی ویرانی دور ہو سکے گی جس کے لئے یوٹیلٹی سٹورز کے حکام دو ارب کے فنڈز جاری ہونے کے باوجود سنجیدہ اقدامات کرنے کو تیار نہیں۔

متعلقہ خبریں