ملکی سلامتی کو خطرہ، حکومت آئی ایم ایف کے سامنے جھک گئی: بلاول بھٹو

اسلام آباد:  بلاول بھٹو نے کہا ہے کہ ہم کہہ رہے تھے آئی ایم ایف کے ساتھ ڈیل ہو رہی ہے، حکومت آئی ایم ایف کے سامنے جھک گئی، ملک کی سلامتی کو خطرہ ہے۔

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا لوگ پوچھتے ہیں فیصلے کون کر رہا ہے ؟ کیا وزیر خزانہ کا فیصلہ آئی ایم ایف کرے گا ؟ وزیر خزانہ کو اچانک ہٹا دیا جاتا ہے، لوگ سوال تو کریں گے۔ انہوں نے کہا خان صاحب کا ہر فیصلہ جھوٹ ثابت ہو رہا ہے، چیئرمین ایف بی آر کی تعیناتی کا ایک طریقہ کار ہے، وفاق اپنے اہداف حاصل نہیں کر رہا۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا وفاقی حکومت کو سندھ کی ترقی سے سیکھنا چاہیئے، عام آدمی مشکلات کا شکار ہے، حکومتی نااہلی کا بوجھ عوام اٹھا رہے ہیں، حکومت کا فرض ہے کمزور طبقے کا خیال رکھے، کہتے ہیں 18 ویں ترمیم کے باعث وفاق دیوالیہ کا شکار ہے۔ انہوں نے کہا اگر وزیراعظم وزیر خزانہ سے ملے ہی نہیں تو فیصلے کون کر رہا ہے ؟ وفاق حملہ کرنے کے بجائے سندھ سے سیکھے، عوام ان کی نا اہلی کا بوجھ کب تک اٹھاتے رہیں گے۔

چیئرمین پیپلزپارٹی نے مزید کہا کہ ٹیکس وصولی کا ہدف صرف 18 ویں ترمیم سے پورا ہوتا ہے، پوری ٹیکس وصولی نہ ہونے سے صوبوں کو نقصان ہو رہا ہے، حکومت ٹیکس وصولی میں بدترین کارکردگی دکھا رہی ہے۔ انہوں نے کہا ہم نے کبھی پاکستان کے معاشی حقوق پر سمجھوتہ نہیں کیا، ہم نے آئی ایم ایف سے ڈیل لی مگر نوکریاں دیں، حکومت نے عوام کو لاوارث چھوڑ دیا، سندھ ٹیکس وصولی کا ہدف پورا کر رہا ہے، وفاقی ٹیکس کا اختیار سندھ کو دے، 100 فیصد اہداف دیں گے، حکومت کی سیاسی جنگ سے عدم استحکام پیدا ہوگا۔

متعلقہ خبریں