ایشیا کپ کی میزبانی بنگلادیش کرکٹ بورڈ کو حتمی فیصلے کا انتظار

ڈھاکا: ایشیا کپ کی میزبانی کے حوالے سے بنگلادیش کو حتمی فیصلے کا انتظار ہے تاہم بی سی بی کی میڈیا اور کمیونیکیشن کمیٹی کے چیئرمین جلال یونس کا کہنا ہے کہ بات چیت ابھی ابتدائی مراحل میں ہے جب کہ تاحال باضابطہ پیشکش نہیں ہوئی۔

ایشین کرکٹ کونسل کے اکتوبر 2015میں ہونے والے اجلاس میں ایشیا کپ 2018کی میزبانی بھارت کو دی گئی تھی، فیوچر ٹور پروگرام میں اس کیلیے ستمبر کا شیڈول بھی رکھا گیا ہے،مگر ایونٹ میں پاکستان کے بھی شامل ہونے کی وجہ سے بی سی سی آئی کو وزارت داخلہ اور خارجہ کا اجازت نامہ درکار ہے، اس سے قبل اسی بنا پرجونیئر ایشیا کپ کی میزبانی ملائیشیا کو دیدی گئی اور کوالالمپور میں مقابلے ہونگے، بھارت کی جانب سے سینئرز کے مقابلے بھی کرانے سے انکار کے بعد اے سی سی کو متبادل وینیو کی تلاش ہے۔

چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کی صدارت میں گذشتہ دنوں دبئی میں ہونے والے اجلاس میں بھی اس حوالے سے کوئی حتمی فیصلہ سامنے نہیں آسکا،البتہ 2018 کے ایڈیشن کیلیے بطور میزبان بنگلہ دیش کو مضبوط امیدوار سمجھا جارہا ہے۔

اس حوالے سے گفتگوکرتے ہوئے بی سی بی کی میڈیا اور کمیونیکیشن کمیٹی کے چیئرمین جلال یونس نے کہاکہ بات چیت ابھی ابتدائی مراحل میں ہے،تاحال باضابطہ پیشکش نہیں ہوئی،اس لیے ابھی حتمی طور پرکچھ نہیں کہہ سکتے،مقابلوں کے انعقاد میں کافی وقت ہونے کی وجہ سے انتظار کرسکتے ہیں، مزید پیش رفت ہونے پر میڈیا کو مزید تفصیلات سے آگاہ کرینگے۔