بلاول بھٹو کی قیادت میں پیپلز پارٹی کا ‘کارواں بھٹو’ ٹرین مارچ کراچی سے روانہ

کراچی: چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی قیادت میں کارواں بھٹو ٹرین مارچ کراچی کے کینٹ اسٹیشن سے روانہ ہوگیا جو کل لاڑکانہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوگا۔

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری ٹرین مارچ کے لیے کینٹ اسٹیشن پہنچے جہاں کارکنان کی بڑی تعداد نے ان کا استقبال کیا جس کے بعد وہ لاڑکانہ کے لیے روانہ ہوگئے۔

‘کاروان بھٹو’ مارچ میں پیپلز پارٹی کے رہنماؤں اور کارکنان کی بڑی تعداد موجود ہے اور پیپلز پارٹی کی جانب سے ٹرین کی بکنگ 10 لاکھ 51 ہزار چار سو روپے میں کرائی گئی ہے۔

کاروان بھٹو ٹرین ایک لگژری اسپیشل سیلون اور ایک اے سی سلیپر سمیت 14 ڈبوں پر مشتمل ہے، ٹرین میں 8 اکانومی کلاس بوگیاں اور دو پاور پیک انجن بھی شامل جب کہ سیکورٹی کے لیےگارڈز کی دو بوگیاں بھی کاروان ٹرین کا حصہ ہیں۔

ٹرین میں اجلاس کے لیے میٹنگ روم، کچن، اور دیگر تمام سہولیات بھی موجود ہیں۔

ٹرین مارچ کے دوران بلاول بھٹو زرداری راستے میں 25 مختلف مقامات پر خطاب کریں گے اور کارکنان کا لہو گرمائیں گے۔

بلاول بھٹو زرداری کراچی سے لاڑکانہ ٹرین مارچ کے دوران 25 مختلف مقامات پر خطاب کریں گے۔ فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر

چیئرمین پیپلز پارٹی ڈرگ روڈ، لانڈھی، جھمپیر، جنگ شاہی، کوٹری، حیدرآباد، اوڈیرو لعل، ٹنڈو آدم، شہداد پور اور شہید بے نظیر آباد ریلوے اسٹیشن پر خطاب کریں گے۔

بلاول بھٹو اپنے آبائی گھر زرداری ہاؤس میں رات کو قیام کریں گے جس کے بعد کارروان بھٹو مارچ کل صبح شہید بے نظیرآباد سے روانہ ہوگا۔

چیئرمین پیپلز پارٹی دوڑ، پڈعیدن، محراب پور، بھریا روڈ، رانی پور، خیر پور، روہڑی، سکھر، حبیب کوٹ، مدیجی، سر شاہنواز بھٹو نوڈیرو اور پھر لاڑکانہ میں بھی خطاب کریں گے۔

کراچی سے لاڑکانہ تک جانے والی خصوصی ٹرین کینٹ اسٹیشن پہنچ گئی جہاں استقبالیہ کیمپ بھی لگایا گیا ہے۔

جیالوں کی بڑی تعداد کینٹ اسٹیشن پر موجود ہے اور اپنے قائد کی منتظر ہے جب کہ اسٹیشن کے اندر اور باہر سیکیورٹی کی بھاری نفری تعینات ہے۔